Share |

حلال گوشت کی منڈی میں حصہ ڈالیں گے،عمران خان

اکنامک ایشوز(آن لائن) وزیر اعظم عمران خان نے کہاہے کہ گورنر ہاؤس پنجاب کی دیواریں فوری گرا دی جائیں، عام آدمی کی معاشی اور سماجی زندگی میں بہتری کے اقدامات تیز کیے جائیں، مہنگائی کم کرنے کیلئے پرائس کنٹرول کمیٹیاں قائم کی جائیں، منی لانڈرنگ کیخلاف بڑی کارروائی ہوگی ،اگلے ہفتے انسداد منی لانڈرنگ کا قانون لا رہے ہیں،سرمایہ دار کی حوصلہ افزائی کرینگے، حلال گوشت کی دنیا بھر میں 2ہزار ارب روپے کی وسیع مارکیٹ ہے جس میں پاکستان کا کوئی حصہ ہی نہیں، ہم اس منڈی میںحصہ ڈالیںگے۔ ہفتے کو عمران خان کی زیر صدارت پنجاب کابینہ کا اجلاس ہوا ،اس دوران وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے سو روزہ کارکردگی پر بریفنگ دی ۔ عمران خان نے صوبے کی کارکردگی پر اطمینان کا اظہار کیا اور کہا کہ ہر وزیر دو صفحوں میں جو جو کام کیا وہ بتائے اور آگے کے پلان کےبارےمیں بھی بتائے گا۔وزیر اعظم نے ٹرانسفر پوسٹنگ پر بھی تحفظات کا اظہار کیا، وزیر اعظم نے واضح کہا کہ ٹرانسفر پوسٹنگ میں کسی منسٹر کا نام نہ آئے۔8،10دسمبر کے درمیان ایک پروگرام پنجاب کے حوالے سے رکھا جائے گا، ہر محکمے کی کارکردگی سامنے رکھی جائیگی۔ 10سے 20تاریخ کے درمیان ہر وزیر اپنے وزارت کارکردگی پریس کانفرس کے ذریعے عوام کو بتائے گا۔دوسری جانب لاہور چیمبرز آف کامرس سے خطاب میں وزیراعظم عمران خان نے کہاہے کہ پاکستان میں 10ارب ڈالرز کی سالانہ منی لانڈرنگ ہوتی ہے ،انسداد منی لانڈرنگ کا قانون اگلے ہفتے متعارف کریں گے اور سرمایہ دار کی حوصلہ افزائی کے لیے ہر ممکن سہولتیں فراہم کی جائیں گی اور ان کی تکالیف کو دور کرنے کے لیے پرائم منسٹر ہاؤس کے خصوصی دفتر سے دور کی جائیں گی،مشکل حالات سے نکلنے کے لئے بنیادی اقدامات کررہے ہیں،سعودی عرب، یو اے ای اور چین سے مثبت ردعمل ملا۔انہوں نے کہا کہ سرمایہ کار کی حوصلہ افزائی کرنی چاہیے اور مثبت رویے کو دیکھ ہی دیگر سرمایہ کار پاکستان میں آئیں گے، لیکن پاکستان میں سرمایہ کار کے لیے مشکلات کے پہاڑ کھڑے کردیئے جاتے ہیں۔انہوں نے واضح کیا کہ سرمایہ کار کو درپیش تمام مسائل کا حل پرائم منسٹرہاؤس میں قائم ہونے والے دفتر سے حل کیے جائیں گے۔عمران خان نے بڑے ٹیکس دہندان کے خلاف ریاستی اداروں کے منفی ردعمل انتہائی مایوس کن قرار دیا۔ وزیراعظم نے بتایا کہ ملک میں سالانہ 10 ارب روپے کی منی لانڈرنگ ہوتی ہے جس کے سدباب کے لیے اگلے ہفتے تک قانون متعارف کرائیں تاکہ منی لامنڈرنگ کے ملزمان کے خلاف سخت کارروائی عمل میں لائی جا سکے،1970کی دہائی میں شروع ہونے والی قومیائی پالیسی کے نتیجے میں ملک تنزلی کی طرف گامزن ہوا اور اس کے ثمرات آج بیوروکراور سیاسی جماعت کے سرمایہ کاروں سے عداوت کی صورت میں نظر آتے ہیں۔ وزیراعظم نے دعویٰ کیا کہ اوورسیزپاکستانیوں کوسہولت دینے سے10ارب ڈالرزکی ترسیلات بڑھ سکتی ہیں،روپے کی قدر میں کمی سے عمران خان نے تسلی دی کہ گھبرانے کی ضرورت نہیں ہے تاہم برآمدات میں اضافے کیلئے برآمد کنندگان کو سہولت دیں گے، مشکل حالات سے نکلنے کیلئے بنیادی اقدامات کررہے ہیں،جاری کھاتوں کے خسارے کو کم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔وزیراعظم نے کہا کہ 27 سال بعد تیل کی بڑی عالمی کمپنی ایگزون پاکستان آرہی ہے، ایگزون پاکستان میں گیس کے بڑے ذخائر تلاش کرے گی، ان کا اندازہ ہے کہ پاکستان میں گیس کے بڑے ذخائر موجود ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ میری کٹوں کی بات کو لوگوں نےعجیب سمجھا، حلال گوشت کی دنیا بھر میں دوہزار ارب روپے کی وسیع مارکیٹ ہے جس میں پاکستان کا حصہ نہ ہونے کے برابر ہے، پاکستان اس مارکیٹ سے بھرپور استفادہ کرسکتا ہے اور اس سلسلے میں اقدامات کئے جائیں گے۔

Thank You for visiting Economic Issues Pk.Com